تمہاری چشمِ حیراں میں کہیں ٹہرا ھوا آنسو

 

 تمہاری چشمِ حیراں میں کہیں ٹہرا ھوا آنسو

 

لبوں پر ان کہی سی بات کا پھیلا ھوا جادو

 

بہت بے ساختہ ھنستے ھوۓ

 

خاموش ھو جانے کی اک ھلکی سی بے چینی

 

تمہارے دونوں ھاتھوں کی کٹوری میں

 

سنہر ے خواب کا جگنو

 

گلابی شام کی دھلیز پہ رکھا ھوا

 

اک ریشمی لمحہ

 

تمہاری نرم سی خوشبو سے وہ مہکا ھوا

اک شبنمی جھونکا

 

محبت میں یہی میرے اثاثے ھی

Advertisements

تم سے کچھ نہیں کہنا

ہم نے سوچ رکھا ہے
چاہے دل کی ہر خواہش
زندگی کی آنکھوں سے اشک بن کے
بہہ جائے
چاہے اب مکینوں پر
گھر کی ساری دیواریں چھت سمیت گر جائیں
اور بے مقدر ہم
اس بدن کے ملبے میں خود ہی کیوں نہ دب جائیں

تم سے کچھ نہیں کہنا
کیسی نیند تھی اپنی،کیسے خواب تھے اپنے
اور اب گلابوں پر
نیند والی آنکھوں پر
نرم خو سے خوابوں پر
کیوں عذاب ٹوٹے ہیں
تم سے کچھ نہیں کہنا
گھر گئے ہیں راتوں میں
بے لباس باتوں میں
اس طرح کی راتوں میں
کب چراغ جلتے ہیں،کب عذاب ٹلتے ہیں
اب تو ان عذابوں سے بچ کے بھی نکلنے کا راستہ نہیں جاناں!
جس طرح تمہیں سچ کے لازوال لمحوں سے واسطہ نہیں جاناں!
ہم نے سوچ رکھا ہے
تم سے کچھ نہیں کہنا

تیری خوشبو کا ھنر کھولیں گے

تیری خوشبو کا ھنر کھولیں گے

آج  ھم  ساتواں  دَر کھولیں گے

 

کون  سا  اسم   پڑھے  بادِ صبا

پھول  کب د یدۂ تر کھولیں گے

 

عشق  کا  بھید  سرِ بام  کبھی

آپ  پر  با رِ دگر   کھولیں   گے

 

اتنی تاریک مسافت  میں  کہاں

ھم  یہ اسبابِ سفر کھولیں  گے

 

عشق والےبھی کبھی وحشت میں

قصۂ   دردِ  جگر    کھولیں     گے

 

آخرِ شب   کی  دعا   سے  پہلے

خواب  کی  بات  مگر کھولیں گے

 

ایسی    بے مہر  فضا  کیسے

لوگ  سچایٔ  کا  دَر  کھولیں  گے

 

نوشی گیلانی